گوگل کا بھی ہواوئے پر کڑا وار

ہواوئے کے لیے ایک اور بری خبر کہ امریکہ میں ہواوئے کی ڈوائسسز بین ہونے کے بعد اب امریکن کمپنی گوگل نے ہواوئے کے ساتھ کئے گئے تمام معاہدوں کو روکتے ہوئے اپنی تمام سروسز کو معطل کرنے کا اعلان کر دیا ہے۔ یہ اعلان ہواوئے کو امریکہ کی ٹیلی مواصلات کمپنیوں سے تعاون نہ کرنے کی وجہ سے لگائے گئے بین کے بعد آج سامنے آیا ہے۔

یہ یقیناْ ہواوئے صارفین کے لیے ایک بڑا جھٹکا ہے کہ اب ان کی مہنگی ڈوائسسز بشمول موبائل کا کیا مستقبل ہوگا۔

ہواوئے

 

گوگل کی اس نئی پابندی کے باعث آج سے ہواوئے صارفین اگلے فیصلہ تک گوگل کی کوئی اپڈیٹ حاصل نہیں کر سکیں گے اور نہ ہی مارکیٹ میں آنے والے نئے موبائلز میں گوگل کی آفیشل اپیس موجود ہونگی یہاں تک کہ گوگل پلے سٹور بھی نہیں۔

گوگل ابھی اندرونی طور پر یہ بھی فیصلہ کر رہا ہے کہ اسے کون کونسی سروس کا خاتمہ کرنا ہوگا۔ آیا اس میں تمام ٹیکنیکل سپورٹ بھی شامل ہونگی یا پھر صرف سروسز کی حد تک پانبدی لگائی جائے گی۔

یہاں اس بات کا ذکر کرنا ضروری ہے کی حال ہی میں ہواوئے نے اپنے سیل میں 50 فیصد اضافہ کرتے ہوئے دنیا کی دوسری بڑی کمپنی ہونے کا عزاز حاصل کر لیا ہے جو کہ ایک بہت بڑی کامیابی ہے۔

ہواوئے

 

ہواوئے صرف موبائل فون ہی نہیں بلکہ سمارٹ واچ بنانے والی بھی دنیا کی بڑی کمپنی ہے اور گوگل کی اس پانبدی سے نا صرف موبائل صارفین متاثر ہونگے بلکہ پوری دنیا میں کروڑو صارفین کے متاثر ہونے کا خدشہ ہے۔

اگر ہواوئے کا گوگل سے تعلق ٹھیک نہ ہوا تو یقیناْ ہواوئے کی ڈوائسسز میں اپڈیٹ نہ آنے کی وجہ سے ہواوئے ڈوائسسز ہیکرز کے لیے کھلی ہونگی۔