گوگل کی سسٹر کمپنی لون نے ہائی اسپیڈ انٹریٹ سروس دینے کےلئے وشال غباروں کا ایک نیٹ ورک کینیا کے دور دراز علائقوں میں چھوڑا ہے جو تیز ترین انٹرنیٹ کی سھولیٹ فراہم کرے گا۔

غباروں کا یہ نیٹورک 4 جی کوریج فراہم کرے گا اس سروس سے لوگ ویڈیو کال، ویب سرفنگ، ای میل اور اسٹریم ویڈیو چلا سکیں گے۔ اس منصوبے کا اعلان دو سال پہلے کیا گیا تھا لیکن کینیا کی حکومت کی طرف سے حتمی منظوری ابھی کچھ دن پہلی دی گئی تھی۔

اب کینیائی حکومت کورونا وائرس کی وبا سے نمٹنے کےلئے تیزرفتار کمیونیکیشن کے لئے اس انٹرنیٹ سروس کا استعمال کررہی ہے۔

اس غباروں والی 4 جی انٹرنیٹ سروس کا تجربہ 35000 صارفین کے اوپر کیا جارہا ہے، ابتدائی طور پر 50000 مربع کلومیٹر(31000 مربع میل) علائقہ کا احاتہ کیاجائے گا۔

اس ہائی اسپیڈ انٹرنیٹ سروس دینے کےلئے مشرقی آفریکہ کے اوپر اسٹریٹواسفیئر میں شمسی توانائی سے چلنے والے35 غبارے مستقل طور پر حرکت میں رہیں گے۔ ان غباروں کو آمریکہ میں لانچ کیا گیا ہے جس کو کینیا کے اوپر لانے کےلئےونڈ کرنٹ کا استعمال کیا گیا ہے۔

سروس کے ایک فیلڈ ٹیسٹ میں ڈاؤن لوڈ کی رفتار18.9 ایم بی پی ایس(میگا بٹس فی سیکنڈ) اور4.7 ایم بی پی ایس کی اپلوڈنگ رفتار کو دیکھا گیا ہے۔ لون نے 2011 میں گوگل کے ایک پروجیکٹ “مون شاٹ پروجیکٹس” کے طور پر آغاز کیا تھا۔

2018 میں ، اس نے ٹیلکوم کینیا کے ساتھ مل کر کمرشل سروس کا آغاز کیا تھا۔

ٹیلکوم کینیا کے چیف ایگزیکٹو موگو کیباتی نے کہا ہے کہ ” یہ آفریقہ میں انٹرنیٹ سروس کی فراہمی کےلئے ایک دلچسپ سنگ میل ہے”۔ انہوں نے مزید کہا ہے کہ ” یہ انٹرنیٹ مہیا کرنے والے غبارے بہت سے کینیا کے باشندوں کے بیچ میں رابطہ کا ذریعہ بنیں گے جو دور دراز علائقوں میں رہتے ہیں”۔

یاد رہے کہ اس سے قبل پیرو میں زلزلے کے دوران انٹرنیٹ سروس دینے کےلئے لون سے آنے والے غبارے استعمال کئے گئے تھے۔

Share: