مشکل وقت اور تنازعات میں گھری دنیا کی مقبول ترین سماجی رابطے کی ویب سائٹ فیس بک نے اپنی سائٹ پر دوستوں کی تلاش کا آسان فیچر ختم کردیا ہے۔

مقبول ترین سماجی رابطے کی ویب سائٹ فیس بک کی جانب سے کیمبرج اینالیٹکا اسکینڈل کے بعد سے صارفین کا اعتماد جیتنے کے لیے اقدامات کیے جارہے ہیں اور اب سوشل نیٹ ورک کے سی ٹی او مائیک شروفر نے تسلیم کیا ہے کہ اس اسکینڈل کے نتیجے میں 8 کروڑ 70 لاکھ صارفین کا ڈیٹا متاثر ہوا۔

ان کا کہنا تھا کہ ایسے اقدامات کیے جارہے ہیں تاکہ ایسا دوبارہ نہ ہوسکے اور اس مقصد کے لیے کی جانے والی سیکیورٹی ایڈجسٹمنٹ کے طور پر فیس بک نے ایک اہم فیچر کو ڈس ایبل کردیا ہے۔ اس فیچر کے ذریعے فیس بک پر کسی صارف کو اس کے فون نمبر یا ای میل کے ذریعے ڈھونڈا جاسکتا تھا اور اکثر افراد کے لیے اپنے دوستوں کو اس کی مدد سے تلاش کرنا آسان ہوتا تھا، کیونکہ ایک ہی نام کے متعدد اکاﺅنٹس میں سے دوست کو نام سے ڈھونڈنا آسان نہیں۔

یہ بھی پڑھیں: کیلوریز بتانے والی موبائل ایپ

تاہم فیس بک نے ایک بلاگ پوسٹ میں کہا کہ مشتبہ عناصر اس فیچر کا غلط استعمال کرکے فون نمبر یا ای میل سرچ باکس پر لکھ کر سامنے آنے والی پروفائل کی عوامی معلومات کا غلط استعمال کرتے۔ اور اس تبدیلی کے کافی زیادہ اثرات مرتب ہونے والے ہیں کیونکہ کمپنی کے خیال میں یہ ان کے تحفظ کے لیے ضروری ہے۔ دوسری جانب فیس بک نے صارف کے ڈیٹا کے انتظام کے حوالے سے تبدیلیوں کا اعلان بھی کیا ہے۔ ایک بلاگ پوسٹ میں اس کی مکمل تفصیلات پڑھی جاسکتی ہیں تاہم اہم تبدیلی فیس بک کی جانب سے کال اور ٹیکسٹ ہسٹری میں کی جانے والی تبدیلیاں ہیں۔

Share: