رازداری سے متعلق مسائل پر 1000 افراد کا سروے سامنے آیا ہےجس میں بوڑھے لوگوں کی طرف سے یہ رائے سامنے آئی ہے کی سمارٹ آلات پر بھروسہ کرنا بہت زیادہ خطرناک ہوتا ہے. 65 سال سے زائد عمر کے سروے کے جواب دہندگان نے کہا کہ مجازی معاون، ٹی وی اور گیمنگ کے نظام ان کے قابل نہیں ہیں، انھیں دس نقطہ پیمانے پر 7.9 کی درجہ بندی کرنا پڑی.

یہ سروے ایک تنظیم “سیف ھوم” کی طرف سے کیا جو گھر کی سلامتی کے بارے معلومات فراہم کرتی ہے. جواب دہندگان – 18 سال کی عمر سے زائد، اور امریکہ سے تعلق رکھتے تھے- ان کو عمر، جنس، کام کاج اور اس طرح کے کئی سوالوں پر مشتمل ایک پرچہ دیا گیا جس میں ان سے یہ بھی پوچھا گیا کہ وہ ٹیکنالوجی اور اس سے متعلق رازداری کے بارے کیا خیالات رکھتے ہیں۔

نتائج سے ظاہر ہوتا ہے کہ دوسرے عمر کے گروہوں کے مقابلے میں 65 سال کی عمر سے زائد افراد کو نہ صرف ٹیکنالوجی کے استعمال کا شوق تھا بلکہ وہ اس کے استعمال کی روک تھام کے لیے اقدامات کرنے کے حق میں تھے۔

تصویر بشکریہ سیف ہومتصویر بشکریہ سیف ہوم

اس سے یہ بھی ظاہر ہوتا ہے کہ وہ نسل جو سمارٹ فون کے دور میں پیدا ہوئی اس کے ٹیکنالوجی کے بارے خیالات، اس نسل سے جو سمارٹ فون کے سے پہلے تھی، سے بہت مختلف ہیں۔ جدید نسل جانتی ہے کہ ان کے فون ریکاڈ کیے جا سکتے ہیں اور وہ اس کام کو کبھی نہیں روک سکتے کیونکہ یہ ٹیکنالوجی کا دور ہے۔

اس سروے میں ایک یہ بھی بہت دلچسپ بات سامنے آئی کہ کچھ لوگوں کا خیال ہے کہ ٹیکنالوجی کے استعمال سے جہاں حکومتیں راز افشاں ہو جانے سے پریشان ہیں وہاں جرائم پیشہ افراد بھی اسی مسلئہ سے خوف ذدہ ہیں۔

safe home privacy imageتصویر بشکریہ سیف ہوم

اس طرح کے سروے ایسی چیزیں نماناں کرتے ہیں جو ہم سب سوچ رہے ہوتے ہیں. پرانے لوگ اسمارٹ فون پر اعتماد نہیں کرتے، نوجوان لوگ ان کو چھوڑنے کے لئے تیار نہیں ہیں. سروے سے سب سے زیادہ بیان کردہ اعداد و شمار: سروے میں 96 فیصد مرد اور 94 فیصد خواتین سروے سے متعلق کہتے ہیں کہ ان کی رازداری کو سب سے زیادہ نقصان ٹیکنالوجی کی طرف سے ہو سکتا ہے.

Share: